محل تبلیغات شما

تفسیر سورہ قصص (1)

DOWNLOAD

 

مقدماتی گفتگو 

قرآن کو کس نگاہ سے پڑھیں تاکہ ۔۔۔قرآن سے لذت حاصل کرسکیں 

قرآن کی قربت کا احساس کب اور کیسے ہوگا 

قرآن میں انبیاء کے داستان اتنی تفصیل سے کیوں بیان کیئے گئے ہیں ؟ 

تمام انبیاء کو ایک انسان واحد تصور کریں ۔۔۔یہ ایک انسان ہے جسکے مختلف نشیب و فراز ہیں 

 سورہ قصص میں حضرت موسی ع کی زندگی کا سا فراز بیان ہو رہا ہے
 

تفسیر سورہ قصص (2)

 

 

 

سورہ قصص کا کلی ھدف  

یہ سورہ کن حالات میں نازل ہوا ؟

حروف مقطعات کی جانب اجمالی اشارہ ؟ 

قرآنی مراتب ۔۔۔قرآنی آیات کے لیئے دور کا اشارہ کیوں آیا ۔۔۔تلک۔۔۔۔۔۔ 

 کیا آیات قرآن کی تفسیر میں روایات کا سہارا لینا چاہیئے یا نہ ؟

 

 

تفسیر سورہ قصص (3)

 

DOWNLOAD

 تِلْکَ آیَاتُ الْکِتَابِ الْمُبِینِ (۲) 

مبین کی وضاحت 

آیا قرآن کی تفسیر ۔۔کسی روایت کی بنا پر کی جاسکتی ہے 

قرآن روایت کو پرکھنے کا معیار ہے یا روایات ،قرآن کے معانی کو طی کرینگی 

فھم قرآن کے نہایت عمیق اور دقیق نکات کی جانب اشارات

 

تفسیر سورہ قصص (۴)

 

DOWNLOAD

 نَتْلُو عَلَیْکَ مِن نَّبَإِ مُوسَىٰ وَفِرْعَوْنَ بِالْحَقِّ لِقَوْمٍ یُؤْمِنُونَ 

قرآن کی تلاوت سے کیا مراد ہے ۔۔۔۔نتلو 

تلاوت اور تعلیم میں کیا فرق ہے 

یہ قرآن کی تلاوت خصوصیت سے رسول اللہ صلعم کے لیئے ہوئی ۔۔ ۔نتلو علیک اس نکتہ کی وضاحت کا راز کیا ہے 

نبا اور  خبر میں  کیا فرق ہے 

من تبعیضیہ لانے کا کیا فلسفہ ہے ۔۔۔مطلب کیوں کہا جا رہا ہے ہم موسی و فرعون کے کچھ اھم احوال بیان کرتے ہیں

یہ اھم احوال ۔۔۔لقوم یومنون ۔۔مومنین کے لیئے ہیں ۔۔۔یعنی کیا 

اور کافی سارے تفسیری نکات

 

 

تفسیر سورہ قصص (۵)

 

DOWNLOAD

  إِنَّ فِرْعَوْنَ عَلَا فِی الْأَرْضِ وَجَعَلَ أَهْلَهَا شِیَعًا یَسْتَضْعِفُ طَائِفَةً مِنْهُمْ یُذَبِّحُ أَبْنَاءَهُمْ وَیَسْتَحْیِی نِسَاءَهُمْ ۚ إِنَّهُ کَانَ مِنَ الْمُفْسِدِینَ (آیه ۴ ) 

فرعون کی قرآن مجید سی خصوصیات بیان کرتا ہے ؟ 

استعمار کیا ہے اور اسکا طریقہ کیا ہوتا ہے  

بنی اسرائیل اس عذاب میں کیوں مبتلا ہوئے 

اور کافی سارے تفسیری نکات

 

*تفسیر سورہ قصص (۶)

وَ نُرِیدُ أَنْ نَمُنَّ عَلَى الَّذِینَ اسْتُضْعِفُوا فِی الْأَرْضِ وَ نَجْعَلَهُمْ أَئِمَّةً وَ نَجْعَلَهُمُ الْوارِثِینَ [5]

فرعون بنی اسرائیل کے بچوں کو کیوں قتل کرتا تھا ۔۔۔سورہ مومن ( غافر ) کی آیه 25 سے تو سمجھ میں آتا ہے یہ واقعہ حضرت موسی ع کے قیام کے بعد کا ہے ۔۔۔پھر ولادت سے کیسے جوڑا جاتا ہے 

فساد پھیلانے والا کیا کرتا ہے ۔۔۔۔مفسد کسے کہتے ہیں 

بات ماضی کی ہو رہی ہے پھر اس آیت میں چھ بار جو لفظ استعمال کیا جا رہا ہے وہ حال اور آیندہ آنے والے زمانہ کو بیان کر رہا ہے ۔۔۔۔ایسے بھلا کیوں لطیف بیانات

اھل معرفت کا بیان ۔۔۔مسیحا اور نجات دہندہ تبہی آتا ہے جب پاکیزہ خون اسی مسیحا کی راہ میں قربان کیا جاتا ہے ۔۔۔جب اتنے بچے موسی بنکر ذبح ہوئے تب جاکر کہیں موسی آیا

 

*تفسیر سورہ قصص (۷)

 

 

DOWNLOAD

وَنُمَکِّنَ لَهُمْ فِى الْأَرْضِ وَنُرِىَ فِرْعَونَ وَهَامَانَ وَ جُنُودَهُمَا مِنْهُم مَّا کَانُواْ یَحْذَرُونَ (۶) وَ أَوْحَیْنا إِلى أُمِّ مُوسى أَنْ أَرْضِعِیهِ فَإِذا خِفْتِ عَلَیْهِ فَأَلْقِیهِ فِی الْیَمِّ وَ لاتَخافِی وَ لاتَحْزَنِی إِنّا رَادُّوهُ إِلَیْکِ وَ جاعِلُوهُ مِنَ الْمُرْسَلِینَ(۷)

مفسد کا عمومی مفھوم ۔۔۔ہر وہ شخص جو کسی موجود کو اپنے کمالات سے روکے ۔۔اور اسی طرح ہر وہ شخص جو کسی انسان کو حجت خدا تک پہنچنے نہ دے وہ سب سے بڑا مفسد اور فرعون صفت انسان ہے 

مستضعف کا وسیع مفھوم ۔۔۔۔چ استضعاف فکری  ، فرھنگی  ، اقتصادی ، اخلاقی اور ی طریقہ سے بھی ہوتا ہے 

عربی میں منت ۔۔۔سنگین اور ثقیل نعمت کو کہتے ہیں ۔۔۔یہ سنگینی  اور ثقل قرآن میں کبھی بذات خود قرآن کی لیئے استعمال ہوتا ہے تو کبھی حجت الہی کے لیئے استعمال ہوا ہے ۔۔پھر دونوں کو جمع کرکے پیغمبر اکرم ص نے ۔۔حدیث ثقلین میں بیان کردیا ، چناچہ یہیں سے معلوم ہوا پیغمبر اکرم ص نے دونوں کو ثقلیں کیوں کہا 

وحی سے کیا مراد ہے ۔۔۔مادر موسی کی جانب وحی ہوئی یعنی کیا 

وحی تشریعی اور وحی تسدیدی میں فرق 

اور کافی سارے نکات

 

تفسیر سورہ قصص (۸) 

 



فَالْتَقَطَهُ آلُ فِرْعَوْنَ لِیَکُونَ لَهُمْ عَدُوًّا وَحَزَنًا ۗ إِنَّ فِرْعَوْنَ وَهَامَانَ وَجُنُودَهُمَا کَانُوا خَاطِئِینَ *
وَقَالَتِ امْرَأَتُ فِرْعَوْنَ قُرَّتُ عَیْنٍ لِی وَلَکَ ۖ لَا تَقْتُلُوهُ عَسَىٰ أَنْ یَنْفَعَنَا أَوْ نَتَّخِذَهُ وَلَدًا وَهُمْ لَا یَشْعُرُونَ* 

مذکورہ بالا آیات کی تفسیر

 

تفسیر قصص (۹) 

 



 
وَ أَصْبَحَ فُؤادُ أُمِّ مُوسى‌ فارِغاً إِنْ کادَتْ لَتُبْدِی بِهِ لَوْ لا أَنْ رَبَطْنا عَلى‌ قَلْبِها لِتَکُونَ مِنَ الْمُؤْمِنِینَ (10) وَ قالَتْ لِأُخْتِهِ قُصِّیهِ فَبَصُرَتْ بِهِ عَنْ جُنُبٍ وَ هُمْ لا یَشْعُرُونَ (11) وَ حَرَّمْنا عَلَیْهِ الْمَراضِعَ مِنْ قَبْلُ فَقالَتْ هَلْ أَدُلُّکُمْ عَلى‌ أَهْلِ بَیْتٍ یَکْفُلُونَهُ لَکُمْ وَ هُمْ لَهُ ناصِحُونَ (12) فَرَدَدْناهُ إِلى‌ أُمِّهِ کَیْ تَقَرَّ عَیْنُها وَ لا تَحْزَنَ وَ لِتَعْلَمَ أَنَّ وَعْدَ اللَّهِ حَقٌّ وَ لکِنَّ أَکْثَرَهُمْ لا یَعْلَمُونَ (13) 

مذکورہ بالا آیات کی تفسیر

 

تفسیر سورہ قصص (10) 


وَ دَخَلَ الْمَدِینَةَ عَلى‌ حِینِ غَفْلَةٍ مِنْ أَهْلِها فَوَجَدَ فِیها رَجُلَیْنِ یَقْتَتِلانِ هذا مِنْ شِیعَتِهِ وَ هذا مِنْ عَدُوِّهِ فَاسْتَغاثَهُ الَّذِی مِنْ شِیعَتِهِ عَلَى الَّذِی مِنْ عَدُوِّهِ فَوَکَزَهُ مُوسى‌ فَقَضى‌ عَلَیْهِ قالَ هذا مِنْ عَمَلِ الشَّیْطانِ إِنَّهُ عَدُوٌّ مُضِلٌّ مُبِینٌ (15) قالَ رَبِّ إِنِّی ظَلَمْتُ نَفْسِی فَاغْفِرْ لِی فَغَفَرَ لَهُ إِنَّهُ هُوَ الْغَفُورُ الرَّحِیمُ (16)

مذکورہ آیات کی تفسیر

 

تفسیر سورہ قصص (11) 

 _
قالَ رَبِّ إِنِّی ظَلَمْتُ نَفْسِی فَاغْفِرْ لِی فَغَفَرَ لَهُ إِنَّهُ هُوَ الْغَفُورُ الرَّحِیمُ (16) قالَ رَبِّ بِما أَنْعَمْتَ عَلَیَّ فَلَنْ أَکُونَ ظَهِیراً لِلْمُجْرِمِینَ (17) فَأَصْبَحَ فِی الْمَدِینَةِ خائِفاً یَتَرَقَّبُ فَإِذَا الَّذِی اسْتَنْصَرَهُ بِالْأَمْسِ یَسْتَصْرِخُهُ قالَ لَهُ مُوسى‌ إِنَّکَ لَغَوِیٌّ مُبِینٌ (18) فَلَمَّا أَنْ أَرادَ أَنْ یَبْطِشَ بِالَّذِی هُوَ عَدُوٌّ لَهُما قالَ یا مُوسى‌ أَ تُرِیدُ أَنْ تَقْتُلَنِی کَما قَتَلْتَ نَفْساً بِالْأَمْسِ إِنْ تُرِیدُ إِلاَّ أَنْ تَکُونَ جَبَّاراً فِی الْأَرْضِ وَ ما تُرِیدُ أَنْ تَکُونَ مِنَ الْمُصْلِحِینَ (19)_ 

مذکورہ آیات کی تفسیر

 

تفسیر سورہ قصص (12) 


 _وَ دَخَلَ الْمَدِینَةَ عَلى‌ حِینِ غَفْلَةٍ مِنْ أَهْلِها فَوَجَدَ فِیها رَجُلَیْنِ یَقْتَتِلانِ هذا مِنْ شِیعَتِهِ وَ هذا مِنْ عَدُوِّهِ فَاسْتَغاثَهُ الَّذِی مِنْ شِیعَتِهِ عَلَى الَّذِی مِنْ عَدُوِّهِ فَوَکَزَهُ مُوسى‌ فَقَضى‌ عَلَیْهِ قالَ هذا مِنْ عَمَلِ الشَّیْطانِ إِنَّهُ عَدُوٌّ مُضِلٌّ مُبِینٌ (15) قالَ رَبِّ إِنِّی ظَلَمْتُ نَفْسِی فَاغْفِرْ لِی فَغَفَرَ لَهُ إِنَّهُ هُوَ الْغَفُورُ الرَّحِیمُ (16) قالَ رَبِّ بِما أَنْعَمْتَ عَلَیَّ فَلَنْ أَکُونَ ظَهِیراً لِلْمُجْرِمِینَ (17) فَأَصْبَحَ فِی الْمَدِینَةِ خائِفاً یَتَرَقَّبُ فَإِذَا الَّذِی اسْتَنْصَرَهُ بِالْأَمْسِ یَسْتَصْرِخُهُ قالَ لَهُ مُوسى‌ إِنَّکَ لَغَوِیٌّ مُبِینٌ (18) فَلَمَّا أَنْ أَرادَ أَنْ یَبْطِشَ بِالَّذِی هُوَ عَدُوٌّ لَهُما قالَ یا مُوسى‌ أَ تُرِیدُ أَنْ تَقْتُلَنِی کَما قَتَلْتَ نَفْساً بِالْأَمْسِ إِنْ تُرِیدُ إِلاَّ أَنْ تَکُونَ جَبَّاراً فِی الْأَرْضِ وَ ما تُرِیدُ أَنْ تَکُونَ مِنَ الْمُصْلِحِینَ (19) 
وَ جاءَ رَجُلٌ مِنْ أَقْصَى الْمَدِینَةِ یَسْعى‌ قالَ یا مُوسى‌ إِنَّ الْمَلَأَ یَأْتَمِرُونَ بِکَ لِیَقْتُلُوکَ فَاخْرُجْ إِنِّی لَکَ مِنَ النَّاصِحِینَ (20) فَخَرَجَ مِنْها خائِفاً یَتَرَقَّبُ قالَ رَبِّ نَجِّنِی مِنَ الْقَوْمِ الظَّالِمِینَ (21)_

مذکورہ بالا آیات (جو حضرت موسی ع کی زندگی کی دوسری فصل کا بیان ہے ) سے انفرادی ، اجتماعی سے اسباق و عبرتیں حاصل ہوتی ہیں اور نیز آخر میں اس فصل کی عرفانی تاویلات

 

 

تفسیر سورہ قصص(13) 

وَ لَمَّا تَوَجَّهَ تِلْقاءَ مَدْیَنَ قالَ عَسى‌ رَبِّی أَنْ یَهْدِیَنِی سَواءَ السَّبِیلِ (22) وَ لَمَّا وَرَدَ ماءَ مَدْیَنَ وَجَدَ عَلَیْهِ أُمَّةً مِنَ النَّاسِ یَسْقُونَ وَ وَجَدَ مِنْ دُونِهِمُ امْرَأَتَیْنِ تَذُودانِ قالَ ما خَطْبُکُما قالَتا لا نَسْقِی حَتَّى یُصْدِرَ الرِّعاءُ وَ أَبُونا شَیْخٌ کَبِیرٌ (23) فَسَقى‌ لَهُما ثُمَّ تَوَلَّى إِلَى الظِّلِّ فَقالَ رَبِّ إِنِّی لِما أَنْزَلْتَ إِلَیَّ مِنْ خَیْرٍ فَقِیرٌ (24) 

مذکورہ بالا آیات کی تفسیر

 

 

تفسیر سورہ قصص (14) 


 _فَسَقى‌ لَهُما ثُمَّ تَوَلَّى إِلَى الظِّلِّ فَقالَ رَبِّ إِنِّی لِما أَنْزَلْتَ إِلَیَّ مِنْ خَیْرٍ فَقِیرٌ (24) فَجاءَتْهُ إِحْداهُما تَمْشِی عَلَى اسْتِحْیاءٍ قالَتْ إِنَّ أَبِی یَدْعُوکَ لِیَجْزِیَکَ أَجْرَ ما سَقَیْتَ لَنا فَلَمَّا جاءَهُ وَ قَصَّ عَلَیْهِ الْقَصَصَ قالَ لا تَخَفْ نَجَوْتَ مِنَ الْقَوْمِ الظَّالِمِینَ ( 25)

مذکورہ بالا آیات کی تفسیر

 

تفسیر سورہ قصص (15) 


 _قالَتْ إِحْداهُما یا أَبَتِ اسْتَأْجِرْهُ إِنَّ خَیْرَ مَنِ اسْتَأْجَرْتَ الْقَوِیُّ الْأَمِینُ (26) 
قالَ إِنِّی أُرِیدُ أَنْ أُنْکِحَکَ إِحْدَى ابْنَتَیَّ هاتَیْنِ عَلى‌ أَنْ تَأْجُرَنِی ثَمانِیَ حِجَجٍ فَإِنْ أَتْمَمْتَ عَشْراً فَمِنْ عِنْدِکَ وَ ما أُرِیدُ أَنْ أَشُقَّ عَلَیْکَ سَتَجِدُنِی إِنْ شاءَ اللَّهُ مِنَ الصَّالِحِینَ (27) قالَ ذلِکَ بَیْنِی وَ بَیْنَکَ أَیَّمَا الْأَجَلَیْنِ قَضَیْتُ فَلا عُدْوانَ عَلَیَّ وَ اللَّهُ عَلى‌ ما نَقُولُ وَکِیلٌ (28)_ 

مذکورہ بالا آیات کی تفسیر

 

 

تفسیر سورہ قصص (16) 


 _قالَتْ إِحْداهُما یا أَبَتِ اسْتَأْجِرْهُ إِنَّ خَیْرَ مَنِ اسْتَأْجَرْتَ الْقَوِیُّ الْأَمِینُ (26) 
قالَ إِنِّی أُرِیدُ أَنْ أُنْکِحَکَ إِحْدَى ابْنَتَیَّ هاتَیْنِ عَلى‌ أَنْ تَأْجُرَنِی ثَمانِیَ حِجَجٍ فَإِنْ أَتْمَمْتَ عَشْراً فَمِنْ عِنْدِکَ وَ ما أُرِیدُ أَنْ أَشُقَّ عَلَیْکَ سَتَجِدُنِی إِنْ شاءَ اللَّهُ مِنَ الصَّالِحِینَ (27) قالَ ذلِکَ بَیْنِی وَ بَیْنَکَ أَیَّمَا الْأَجَلَیْنِ قَضَیْتُ فَلا عُدْوانَ عَلَیَّ وَ اللَّهُ عَلى‌ ما نَقُولُ وَکِیلٌ (28)_ 

مذکورہ بالا آیات کے اندر دروس ، عبرتیں اور ہمارے لیئے سبق ، و نیز عرفانی تاویلات


مشخصات

تبلیغات

محل تبلیغات شما

آخرین ارسال ها

موسسه خیریه سگال
محل تبلیغات شما محل تبلیغات شما

آخرین جستجو ها

تبلیغات متنی
پایگاه جامع بانک اطلاعاتی مشاغل ارومیه - وبلاگ چلو رمان آموزش دیجیتال مارکتینگ آرامشکده ... خرید و فروش مبل راحتی و سلطنتی و سرویس خواب در شیراز دانلود سریال های برتر InfoBlog کار با auto play وشکوش